کرغزستان اور پاکستان اقتصادی شراکت داری کو فروغ دے کر ترقی و خوشحالی کی نئی راہیں کھول سکتے ہیں، مہر کاشف یونس

کرغزستان ٹریڈ ہائوس کے چیئرمین مہر کاشف یونس نے کہا ہے کہ کرغزستان اور پاکستان کا سٹریٹیجک محل وقوع اور متنوع معیشتیں دونوں ممالک کے درمیان تجارتی تعاون کے منفرد مواقع فراہم کرتی ہیں۔ اتوار کو یہاں ظہیر الدین کی قیادت میں درآمد و برآمد کنندگان کے ایک وفد سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کرغزستان کے قدرتی و معدنی وسائل اور پاکستان کی متحرک مارکیٹ کے مابین شاندار ہم آہنگی پائی جاتی ہے جس کا موثر طریقے سے استعمال دونوں ممالک کے لیے بے مثال اقتصادی ترقی کی بنیاد بن سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ قریبی سفارتی تعلقات کے باوجود دونوں ممالک کے درمیان موجودہ تجارتی حجم اپنی صلاحیت سے بہت کم ہے۔ اس لئے ترجیحی بنیادوں پر تجارتی طریقہ کار کو آسان بنانے، محصولات کو کم کرنے اور مشترکہ منصوبوں کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اقتصادی شراکت داری کو فروغ دے کر ہم دوستانہ تعلقات کو مضبوط اور خوشحالی کی نئی راہیں کھول سکتے ہیں۔ فوری اور فیصلہ کن اقدامات کر کے دونوں ممالک پائیدار اقتصادی ترقی کی راہ پر گامزن ہو سکتے ہیں۔ مہر کاشف یونس، جو گولڈ رنگ اکنامک فورم کے وائس چیئرمین اور وفاقی ٹیکس محتسب کے کوآرڈینیٹر بھی ہیں، نے کہا کہ کرغزستان ٹریڈ ہاﺅس پاکستان میں کرغزستان کے سفیر اولان بیک توتوئیف کے تعاون سے درآمد و برآمد کنندگان کو بہترین سہولیات فراہم کر رہا ہے اور اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ ون آن ون ملاقاتوں کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نیشنل لاجسٹک کارپوریشن (این ایل سی) کے کنٹینرز چین کے زمینی راستے سے پاکستان کا برآمدی سامان لے جا رہے ہیں جو کہ ایک کامیاب اور اچھا تجربہ ہے، بزنس کمیونٹی کو اس سے بھر پور استفادہ کرنا چاہیے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں