دہشت گردوں کا اصل ہدف پاکستانی معیشت ہے،میاں زاہد حسین

معاشی حالات بہتر ہونے لگیں تو دہشت گردی شروع ہو جاتی ہے،صدر کراچی انڈسٹریل الائنس

نیشنل بزنس گروپ پاکستان کے چیئرمین، پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولزفورم وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدراورسابق صوبائی وزیرمیاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ ملک میں جب بھی معاشی حالات بہتراورماحول سرمایہ کاری کے لئے سازگار ہونے لگتا ہے تو دہشت گردی شروع ہوجاتی ہے جس سے سارے کیے کرائے پر پانی پھرجاتا ہے۔

تقریباً تمام ممالک، غیرملکی ادارے اور سرمایہ کار کسی بھی ملک میں سرمایہ کاری کے بارے میں فیصلہ آئی ایم ایف کی رائے اور معاشی ریٹنگ کی روشنی میں کرتے ہیں۔ پاکستان کے بارے میں آئی ایم ایف کی رائے اور عالمی اداروں کی ریٹنگ بہتر ہونے لگتی ہے تو سرمایہ کاری روکنے کے لئے دہشت گردی شروع کردی جاتی ہے جو قابل غور ہے۔

میاں زاہد حسین نے کاروباری برادری سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت حکومت، فوج، بیشتر سیاسی پارٹیاں اوردیگرادارے پاکستانی معیشت کے بارے میں ایک پیج پرہیں جس کے بہتر اثرات بھی سامنے آرہے ہیں اورایسے وقت میں دہشت گردی پریشان کن اور قابل مذمت ہے۔

میاں زاہد حسین نے مزید کہا کہ نگران حکومت اور فوج کی کوششوں سے سمگلنک، زخیرہ اندوزی، ڈالرمافیا اورغیرقانونی تارکین وطن میں کمی آئی ہے جس سے معیشت پر بوجھ کم ہوا ہے۔ ایس آئی ایف سی کی وجہ سے سرمایہ کاری کا ماحول بہتر ہو رہا ہے، غیرملکی سرمایہ کار پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے کے لئے سنجیدہ ہورہے ہیں مگر ایسے موقعے پر پاکستان کے دشمنوں نے ایک بار پھر دہشت گردانہ کاروائیاں شروع کردیں ہیں تاکہ سرمایہ کارخوفزدہ ہوجائیں۔

اس باردہشت گردوں کا اصل ہدف پاکستان کا امیج اور ایس آئی ایف سی لگتا ہے۔ میاں زاہد حسین نے مزید کہا کہ دوست ممالک نے پاکستان میں بھاری سرمایہ کاری کا وعدہ کیا ہوا ہے مگر ایسے واقعات سے انکے ارادے کمزور پڑسکتے ہیں۔ اس سے قبل چینی مفادات کو بھی باربار نشانہ بنایا جا چکا ہے جو افسوسناک ہے۔ ان مسائل کے حل کے لئے سیکورٹی کے نظام کو مزید بہتر بنانا پڑے گا تاکہ ملک کو معاشی مشکلات کے دلدل سے باہر نکالا جا سکے اس سلسلے میں مسلح افواج کی کوششیں اور قربانیاں قابل ستائش ہیں جن کی وجہ سے پاکستان کے سیکیورٹی معاملات بہتر ہونے کی توقع ہے۔

ایس ائی ایف سی کی غیر ملکی سرمایہ کاروں کو راغب کرنے کی کوششیں، روڈ شوز، ون ونڈو آپریشن اور فوری فیصلے گیم چینجر ثابت ہوں گے۔ پاکستان کے دشمن یہی چاہتے ہیں کہ پاکستان میں آنے والے سرمائے کارخ بدل دیا جائے، اس سلسلے میں پاکستان میں موجود دہشت گرد گروپوں اور سیاسی انتشار سمیت ہر قسم کے حربے استعمال کئے جاتے ہیں جن کی بیخ کنی کرنے کی ضرورت ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں