صنعت کاروں کو ٹینکر مافیا کے رحم و کرم پو چھوڑدیا گیا۔ صدر کاٹی

 کورنگی ایسو سی ایشن آف ٹریڈ اینڈ انڈسٹری (کاٹی) کے صدر فراز الرحمان نے کہا ہے کہ واٹر بورڈ اور ٹینکر مافیا نے کورنگی کے صنعتکاروں کی مشکلات میں اضافہ کر دیا، جبکہ صنعتی علاقے کیلے نالوں کی صفائی کا بھی خاطر خواہ انتظام نہیں کیا جا رہا۔ واٹر بورڈ کی جانب سے متعدد یقین دہانیوں کے باوجود صنعتکاروں کو پانی فراہم نہیں کیا جا رہا جس کے باعث صنعتکار بھاری قیمت پر ٹینکر خریدنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ واٹر بورڈ صنعتی علاقے کی بہتری میں دلچسپی نہیں رکھتا یہی وجہ ہے کہ پاکستان کے سب سے بڑے صنعتی علاقے کے صنعتکاروں کو ٹینکر مافیا کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے۔ صدر کاٹی نے کہا کہ کورنگی ایسو سی ایشن نے متعدد بار واٹر بورڈ کے حکام کو مشکلات سے آگاہ کیا، جس میں پانی اور سیوریج لائنوں کی بہتری سرفہرست تھی، تاہم واٹر بورڈ کی جانب سے ماضی میں مسائل حل کرنے کے وعدے کئے گئے اور یقین دہانی کرائی گئی کہ صنعتکاروں کو پانی بلا روک ٹوک فراہمی اور سیوریج کی لائینوں کو ٹھیک کیا جائے گا۔

تاہم آج بھی ٹینکر مافیا سرگرم ہے اور صنعتکاروں کے حصہ کا پانی ٹینکر مافیا من مانی قیمت میں فروخت کر رہا ہے، جبکہ سیوریج کا نظام بھی تباہی کا شکار ہے۔ فراز الرحمان نے مزید کہا کہ کورنگی کے صنعتکار اپنی مدد آپ کے تحت کبھی سیوریج کی لائینیں ڈالر کر نکاسی کا انتظام کرتے ہیں، کبھی گیس کا مسئلہ ہو تو ایل این جی کا انتظام کر رہے ہوتے ہیں، بجلی کا مسئلہ ہو تو متبادل کی بھاگ دوڑ میں پھنسے ہوتے ہیں، صنعتی علاقے کی بہتری کیلئے بھی صنعتکاروں نے اپنی مدد آپ کے تحت ہی سڑکوں اور شاہراہوں کی بحالی کا کام کیا جو انتظامیہ کی ذمہ داری تھی۔

-انہوں نے کہا کہ واٹر بورڈ کی نااہلی کی وجہ سے کورنگی میں صنعتیں بند ہونا شروع ہوگئی ہیں اور صنعتکار اپنا سرمایہ دیگر شہروں اور ممالک میں منتقل کرنے کا سوچ رہے ہیں۔ صدر کاٹی نے وزیر اعلی سندھ اور انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ صنعتکاروں کو بنیادی سہولیات کی فراہمی یقینی بنائی جائے ورنہ کراچی سے انڈسٹری بند ہوجائے گی اور حکومت ریونیو کے اہداف حاصل کرنے میں ناکام ہوجائے گی۔ فراز الرحمان نے کہا کہ ضروری ہے کہ شہر میں انڈسٹری کی جان ٹینکر مافیا سے چھڑائی جائے اور صنعتکاروں کو حصے کے مطابق پانی کی دستیابی یقینی بنائی جائے اور سیوریج کا نظام بہتر بنانے کیلئے ہنگامی بنیادوں پر کام کیا جائی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں