معاشی ترقی کےلئے بیرونی قرضوں سے جان چھڑانا ہوگی، خواجہ جمال سیٹھی

آل کراچی تاجر الائنس کے سرپرست اعلیٰ خواجہ جمال سیٹھی نے کہا ہے کہ معاشی ترقی اور ملکی خوشحالی کے لیئے بیرونی قرضوں سے جان چھڑانا ہوگی ملکی معیشت سے منسلک خدشات بڑھتے جارہے ہیں اس میں کوئی شک نہیں کہ ہے کہ پاکستان اس نہج تک ملک کے حکمرانوں کے غلط فیصلوں کے نتیجے میں پہنچا ہے سیاستدان ایکدوسرے کے ساتھ بیٹھنا نہیں چاہتے بلکہ ایکدوسرے کے خلاف نازیبا الفاظ استعمال کرتے ہیں، ان خیالات کا اظہارا نہوں نے آل کراچی تاجرالائنس کی جانب سے جلدی کاروبار بند ش کے حکومتی فیصلے کے خلاف منعقدہ تاجروں کے ہنگامی اجلاس میں بات چیت کرتے ہوئے کیا، اجلاس میں آل کراچی تاجر الائنس کے سرپرست اعلیٰ خواجہ جمال سیٹھی، چیئر مین حکیم شاہ، سینئر نائب چیئرمین منصور جیک، نائب چیئرمین شاکر فینسی، جنرل سیکرٹری طاہر سربازی، جوائنٹ سیکرٹری شعیب بلوچ، فنانس سیکرٹری سعید حنفیہ، انفارمیشن سیکرٹری اسلم بھٹی، صدرکراچی آصف گلفام، آل کراچی تاجر الائنس کے نائب صدر و صدر لیاقت آباد حیدری مارکیٹ سید فراز احمد ویگر عہدیداران بھی موجودج تھے،
خواجہ جمال سیٹھی کا کہنا تھا کہ ملک کا معاشی بحران ایک جماعت حل نہیں کرسکتی اور اس کے لیئے ایک چارٹرڈ آف اکانومی کی ضرورت ہے جس میںتمام جماعتوں کو مل کر بیٹھنا ہوگا پاکستان کو فوری طور پر معاشی بحالی کے لیئے سب سے پہلے اپنی کرنسی کو مارکیٹ کی بنیاد پر لانا ہوگا تا کہ ترسیلات زر کو فروغ دینے کے علاوہ برآمدات کو بھی فروغ حاصل ہو، پاکستان کو زرمبادلہ کی شدید قلت کا سامنا ہے اورکاروبار کو جاری رکھنا مشکل ہوگیا ہے، اس موقع پر آل کراچی تاجر الائنس کے چیئرمین حکیم شاہ کا کہنا تھا کہ پاکستان کی معاشی صورتحال سنگین ہوگئی ہے جس کی وجہ سے تاجر برادری میں شدید تشویش اور بے چینی پائی جارہی ہے کراچی کی تاجر برداری کی یہ بھرپور کوشش ہے کہ کاروباری سرگرمیاں چلتی رہیں تاکہ عوام کی مشکلات میں مزید اضافہ نہ ہو، بڑہتی ہوئی بیروزگاری اور مہنگائی سے پہلے ہی عام انسان کے لیئے نظام زندگی چلانا مشکل ترین ہوتا جارہا ہے ایسے میں اگر تاجر برادری کو کسی بھی وجہ سے کاروبار بند کرنا پڑا تو اس کے نہایت منفی اثرات مرتب ہوں گے اور ملکی معیشت مزید خراب ہوجائیگی ، انہوں نے کہا کہ مشکل وقت میں متحد ہوکر مسائل کو حل کرنے والی قومیں ہی کامیابی اور ترقی کے منازل طے کرتی ہیں اس وقت جو ملکی حالا ت ہیںایسے میں نہ صرف تمام سیاسی جماعتوں کو بلکہ پوری قوم ملکی ترقی کے لیئے متحدہو کر کام کرنا ہوگا اور ایسی پالیسیاں بنانی ہوں گی جس سے پاکستان اور یہاں کی عوام کو فائدہ ہو اور ہمارے ملک کی معیشت مضبوط ہو اگر ہم نے ملکی معیشت کے لیئے سنجیدگی سے اقدامات نہ کیے تو اس کے نتائج مزید خراب اور بھیانک ترین بھی ہوسکتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں